yeh jafa-e-ghum ka chara, voh najaat-e-dil ka aalam


یہ جفائے غم کا چارہ، وہ نِجات دل کا عالم
ترا حُسن دستِ عیسٰی، تری یاد رُوئے مریم

دل و جاں فدائے راہے کبھی آ کے دیکھ ہمدم
سرِ کُوئے دل فِگاراں شبِ آرزو کا عالم

تری دِید سے سِوا ہے ترے شوق میں بہاراں
وہ چمن جہاں گِری ہے تری گیسوؤں کی شبنم

یہ عجب قیامتیں ہیں تری رہگزر میں گزراں
نہ ہُوا کہ مَر مِٹیں ہم ، نہ ہُوا کہ جی اُٹھیں ہم
ل
و سُنی گئی ہماری، یُوں پِھرے ہیں دن کہ پھر سے
وہی گوشہِ قفس ہے، وہی فصلِ گُل کا ماتم

فیض احمد فیض

yeh jafa-e-ghum ka chara, voh najaat-e-dil ka aalam
tera husn dast-e-iisa, teri yaad rooh-e-mariyam

dil-o-jaan fidaayen raahen, kabhi aa key dekh humdum
Sar-e-kuu-e-dil figaaraN, shab-e-aarzuu ka aalam

teri deed se sivaa haiN, terey shauq mey baharaaN
voh chaman jahan_giri hai, tere gesuuoN ki shabnam

yeh ajab qayamataiN haiN, teri rehguzar maiN guzraaN
na hua ke mar mitey hum, na hua ke ji uThey hum

lo suuni gayi hamari, yoon phirey hain din ke phir se
vohi goshaa-e-qafas hai, vohi fasl-e-gul kaa maatam

Advertisements

ایک خیال “yeh jafa-e-ghum ka chara, voh najaat-e-dil ka aalam” پہ

  1. na koi dost hay na raqeeb hay—ye tera shehr kitna ajeeb hay
    wo jo ishq tha wo junoon tha—ye jo hijre hay ye naseeb hay
    mey kisay kahoon meray saath chal—yahaun sub k ser pe saleeb hay
    yahaun kis ka chehra para karooun — yahaun kon ithna qareeb hay
    tujay daikh k hoon mey sochta — tu habeeb hay k raqeeb hay

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s