sukoon e dil ke liye kuch to ehtimaam karoon


sukoon e dil ke liye kuch to ehtimaam karoon

zara nazar to mile phir unhain salaam karoon

 

mujhe to hosh nahin aap mashwara deeje

kahan se cherron fasana, kahan tamaam karoon

 

uhni ke zulam ka shikwa karoon zamane se

unhi ke haq main duaein main subah shaam karoon

 

woh bewafa hain to ham ne ‘Shakeel’ soch liya

mujhe kasam hai kisi se agar kalaam karoon

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s