جو تری تلاش میں گُم ہوئے کبھی اُن دنوں کا حساب کر


نہ سماعتوں میں تپش گُھلے نہ نظر کو وقفِ عذاب کر
جو سنائی دے اُسے چپ سِکھا جو دکھائی دے اُسے خواب کر

ابھی منتشر نہ ہو اجنبی، نہ وصال رُت کے کرم جَتا!
جو تری تلاش میں گُم ہوئے کبھی اُن دنوں کا حساب کر

مرے صبر پر کوئی اجر کیا مری دو پہر پہ یہ ابر کیوں؟
مجھے اوڑھنے دے اذیتیں مری عادتیں نہ خراب کر

کہیں آبلوں کے بھنور بجیں کہیں دھوپ روپ بدن سجیں
کبھی دل کو تِھل کا مزاج دے کبھی چشمِ تِر کو چناب کر

یہ ہُجومِ شہرِ ستمگراں نہ سُنے گا تیری صدا کبھی،
مری حسرتوں کو سُخن سُنا مری خواہشوں سے خطاب کر

یہ جُلوسِ فصلِ بہار ہے تہی دست، یار، سجا اِسے
کوئی اشک پھر سے شرر بنا کوئی زخم پھر سے گلاب کر

(محسن نقوی)
(رختِ شب)

ایک بار اور بھی کیوں عرض تمنا نہ کروں


ایک بار اور بھی کیوں عرض تمنا نہ کروں
کہ تو انکار بھی کرتا ہے عجب ناز کے ساتھ

لے جو ٹوٹی تو صدا آئی شکست دل کی
رگ جاں کا کوئی رشتہ ہے رگ ساز کے ساتھ…!!!

شکستہ پائی ارادوں کے پیش و پس میں نہیں


شکستہ پائی ارادوں کے پیش و پس میں نہیں
دل اُس کی چاہ میں گُم ہے جو میرے بس میں نہیں

براہِ روزنِ زنداں ہَوا تو آتی تھی
کُھلی فضا میں گُھٹن وہ ہے جو قفس میں نہیں

عجیب خواب تھا آنکھیں ہی لے گیا میری
کرن کا عکس بھی اب میری دسترس میں نہیں

پروین شاکر

ﯾﮧ ﻧﮕﺎﮦِ ﺷﺮﻡ ﺟُﮭﮑﯽ ﺟُﮭﮑﯽ، ﯾﮧ ﺟﺒﯿﻦِ ﻧﺎﺯ ﺩُﮬﻮﺍ ﮞ


ﯾﮧ ﻧﮕﺎﮦِ ﺷﺮﻡ ﺟُﮭﮑﯽ ﺟُﮭﮑﯽ، ﯾﮧ ﺟﺒﯿﻦِ
ﻧﺎﺯ ﺩُﮬﻮﺍﮞ ﺩُﮬﻮﺍﮞ
ﻣِﺮﮮ ﺑﺲ ﮐﯽ ﺍﺏ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﺍﺳﺘﺎﮞ، ﻣِﺮﺍ
ﮐﺎﻧﭙﺘﺎ ﮨﮯ ﺭُﻭﺍﮞ ﺭُﻭﺍﮞ
ﯾﮧ ﺗﺨﯿّﻼﺕ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ، ﯾﮧ ﺗﺼﻮّﺭﺍﺕ ﮐﯽ
ﺑﻨﺪﮔﯽ
ﻓﻘﻂ ﺍِﮎ ﻓﺮﯾﺐِ ﺧﯿﺎﻝ ﭘﺮ، ﻣِﺮﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﮯ
ﺭﻭﺍﮞ ﺩﻭﺍﮞ
ﻣِﺮﮮ ﺩﻝ ﭘﮧ ﻧﻘﺶ ﮨﯿﮟ ﺁﺝ ﺗﮏ، ﻭﮦ ﺑﺎ
ﺍﺣﺘﯿﺎﻁ ﻧﻮﺍﺯﺷﯿﮟ
ﻭﮦ ﻏﺮﻭﺭ ﻭ ﺿﺒﻂ ﻋﯿﺎﮞ ﻋﯿﺎﮞ، ﻭﮦ
ﺧﻠﻮﺹِ ﺭﺑﻂ ﻧﮩﺎﮞ ﻧﮩﺎﮞ
ﻧﮧ ﺳﻔﺮ ﺑﺸﺮﻁِ ﻣﺂﻝ ﮨﮯ، ﻧﮧ ﻃﻠﺐ ﺑﻘﯿﺪِ
ﺳﻮﺍﻝ ﮨﮯ
ﻓﻘﻂ ﺍﯾﮏ ﺳﯿﺮﯼِ ﺫﻭﻕ ﮐﻮ، ﻣﯿﮟ ﺑﮭﭩﮏ
ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮩﺎﮞ ﮐﮩﺎﮞ
ﻣِﺮﯼ ﺧﻠﻮﺗﻮﮞ ﮐﯽ ﯾﮧ ﺟﻨّﺘﯿﮟ ﮐﺌﯽ ﺑﺎﺭ ﺳﺞ
ﮐﮯ ﺍُﺟﮍ ﮔﺌﯿﮟ
ﻣﺠﮭﮯ ﺑﺎﺭﮨﺎ ﯾﮧ ﮔﻤﺎﻥ ﮨﻮﺍ، ﮐﮧ ﺗﻢ ﺁﺭﮨﮯ ﮨﻮ
ﮐﺸﺎﮞ ﮐﺸﺎﮞ..
ﺍﻗﺒﺎﻝ ﻋﻈﯿﻢ

جو ظلم تو سہتا ہے،،،، بغاوت نہیں کرتا


وہ شخص کہ میں جس سے محبت نہیں کرتا
ہنستا ہے مجھے دیکھ کے،،،، نفرت نہیں کرتا

پکڑا ہی گیا ہوں تو مجھے دار پہ کھینچو
سچا ہوں،،،،،، مگر اپنی وکالت نہیں کرتا

کیوں بخش دیا مجھ سے گناہ گار کو مولا؟
منصف تو کسی سے بھی رعایت نہیں کرتا

گھر والوں کو غفلت پہ سبھی کوس رہے ہیں
چوروں کو مگر،،،،،،،، کوئی ملامت نہیں کرتا

کس قوم کے دل میں نہیں جذبات براہیم
کس ملک پہ نمرود،،،، حکومت نہیں کرتا

دیتے ہیں اجالے،،،، میرے سجدوں کی گواہی
میں چھپ کے اندھیرے میں عبادت نہیں کرتا

بھولا نہیں میں،،،،،، آج بھی آداب جوانی
میں آج بھی اوروں کو نصیحت نہیں کرتا

انسان یہ سمجھیں کہ یہاں دفن خدا ہے
میں ایسے مزاروں کی،،، زیارت نہیں کرتا

دنیا میں قتیلؔ اس سا منافق نہیں کوئی
جو ظلم تو سہتا ہے،،،، بغاوت نہیں کرتا

قتیل شفائی

دورکی بات


آنکھ کھل جاتی ہےجب رات کو سوتے سوتے
کتنی سونی نظر آتی ہے گزر گاہ حیات
ذہن و وجدان میں یوں فاصلے تن جاتے ہیں
شام کی بات بھی لگتی ہےبہت دورکی بات

احمد ندیم قاسمی