ذکر شب فراق سے وحشت اسے بھی تھی


ذکر شب فراق سے وحشت اسے بھی تھی 

میری طرح کسی سے محبت اسے بھی تھی 

مجھ کو بھی شوق تھا نئے چہروں کی دید کا 

رستہ بدل کے چلنے کی عادت اسے بھی تھی 

اس رات دیر تک وہ رہا محو گفتگو 

مصروف میں بھی کم تھا فراغت اسے بھی تھی 

مجھ سے بچھڑ کے شہر میں گھل مل گیا وہ شخص 

حالانکہ شہر بھر سے عداوت اسے بھی تھی 

وہ مجھ سے بڑھ کے ضبط کا عادی تھا جی گیا 

ورنہ ہر ایک سانس قیامت اسے بھی تھی 

سنتا تھا وہ بھی سب سے پرانی کہانیاں 

شاید رفاقتوں کی ضرورت اسے بھی تھی 

تنہا ہوا سفر میں تو مجھ پہ کھلا یہ بھید 

سائے سے پیار دھوپ سے نفرت اسے بھی تھی 

محسنؔ میں اس سے کہہ نہ سکا یوں بھی حال دل 

درپیش ایک تازہ مصیبت اسے بھی تھی 

محسن نقوی

Advertisements

dunya ne teri yad se begana kar diya


دونوں جہاں تیری محبت میں ہا ر کے

وہ جا رہا ہے کوئ شب غم گزار کے

ویراں ہے میکدہ خم و ساگر اداس ہیں

تم کیا گئے کہ روٹھ گئے دن بہار کے

اک فرصت گناہ ملی وہ بھی چار دن

دیکھے ہیں ہم نے حوصلے پروردگار کے

دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کر دیا

تجھ سے بھی دلفریب ہیں غم روزگار کے

بھولے سے مسکرا تو دیا تھا وہ آج فیض 

مت پوچھ ولولے دل نہ کردہ کار کے

donon jahan teri muhabbat men har ke
voh ja raha hai koi shab-e gham guzar ke.

viran hai maikada khum-o saghar udas hain
tum kya gae ki ruth gae din bahar ke.

ik fursat-e gunah mili voh bhi char din
dekhe hain ham ne hausale parvardagar ke.

dunya ne teri yad se begana kar diya
tujh se bhi dilfareb hain gham rozgar ke.

bhule se muskara to diye the voh aj Faiz
mat puch valvale dil-e na-karda-kar ke.

Faiz Ahmad Faiz

فر قے نہ نہد عاشق در کعبہ و بتخانہ


فر قے نہ نہد عاشق در کعبہ و بتخانہ

ایں جلوتِ جانانہ، آں خلوتِ جانانہ

Farqe na nahad aashiq dar kaaba o but-khana

Een jalwat-e-janaana, aan khalwat-e-janaana

          [The lover does not differentiate between kaaba and the idol-house.           That is the beloved in crowd, this is the beloved alone]

شادم کہ مزار من درکوُےَ حرم بستند

راہے ز مژہ کاوم از کعبہ بہ بتخانہ 

Shaad-am keh mazaar-e-man dar kooey haram bastand

Raahe ze miyya kaavam az kaaba ba but-khaana

         [Main khush hoon keh maira mazaar ka’aba ki gali men banaaya hai         Apni palkon se, kaaba se but-khaana tak, raasta khodoon ga]

از بزم جہا ن خوشتر از حور و جناں خوشتر

 یک  ہمدم  فرزانہ  و  ز  با دہ  و  پیمانہ 

Az bazm-e-jahaan khush-tar, az hoor-o-jinaan khush-tar

Yak hamdam-e-farzaana vaz baada do paimaana

        [Bazm-e-jahaan se behtar hai, hooron aur jinon se behtar hai (better        than houris and jinn)        aik aqalmand dost, do paimaane ki sharaab (double peg) se achha hai]

ہر کس  نگہے دارد  ہر کس  سخنے دارد

 در بزم  تو می خیزد افسا نہ  ز افسانہ

Har kas nig’he daarad, har kas sukhane daarad

Dar bazm-e-to me-khaizad afsaana za afsaana

          [Everyone has a look and everyone has something to say.           In your ‘mehfil’, story gives rise to story]

این  کیست  کہ بر دلہا  آ وردہ شبیخو نے

 صد شہر  تمنا  را  یغما  زدہ    ترکانہ!

Een keest keh bar dil-ha avardah shabe-khoone

Sad shehr-e-tamanna ra yaghma zadah turkaana

        [Yeh kaun hai jis ne dilon peh shabkhoon mara hai (carried out a         surprise attack by night)?        (Aur) tamanna ke sau shehron ko turkon ki tarah loot liya hai.        (Plundered like the Turks do.)]

در دشت جنو نِ من جبریل زبوں صیدے

 یزدان بہ  کمند  آور  اے  ہمتِ  مردانہ  

Dar dasht-e-junoon-e-man Jibreel zaboon saide 

Yazdaan ba kumand aavar ai himmat-e-mardaana  

[In the desert of my junoon (madness) the archangel Gabrael is a lowly  prey.  Oh, my manly courage, get God himself into your snare.]

اقبال  بہ منبر زد  رازے  کہ  نہ با ید گفت

 نا پختہ  بروں  آمد  از  خلوتِ   میخا نہ
Iqbal ba mimber zad raaze keh na baayad guft

Na pukhtah baroon aamad az khalwat-e-maikhana

          [Iqbal said from the pulpit the secret that should not be told.           He came out from the solitude of the wine-house, while he was still          immature (na-pukhta)].

 

وہ حیات اصل میں کچھ نہیں ، جو حیات غم سے بَری رہی


کوئی جائے طُور پہ کس لئے کہاں اب وہ خوش نظری رہی

نہ وہ ذوق دیدہ وری رہا ، نہ وہ شان جلوہ گری رہی

جو خلش ہو دل کو سکُوں ملے ، جو تپش ہو سوزِ درُوں ملے

وہ حیات اصل میں کچھ نہیں ، جو حیات غم سے بَری رہی

وہ خزاں کی گرم روّی بڑھی تو چمن کا روپ جُھلس گیا

کوئی غنچہ سر نہ اٹھا سکا ، کوئی شاخِ گُل نہ ہری رہی

مجھے بس ترا ہی خیال تھا ترا روپ میرا جمال تھا

نہ کبھی نگاہ تھی حور پر ، نہ کبھی نظر میں پری رہی

ترے آستاں سے جدا ہوا تو سکونِ دل نہ مجھے ملا

مری زندگی کے نصیب میں جو رہی تو دربدری رہی

ترا حُسن آنکھ کا نور ہے ، ترا لطف وجہہِ سرور ہے

جو ترے کرم کی نظر نہ ہو تو متاعِ دل نظری رہی

جو ترے خیال میں گُم ہوا تو تمام وسوسے مٹ گئے

نہ جُنوں کی جامہ دری رہی ، نہ خرد کی درد سری رہی

مجھے بندگی کا مزا ملا ، مجھے آ گہی کا صلہ ملا

ترے آستانہءِ ناز پر ، جو دھری جبیں تو دھری رہی

یہ مہ و نجوم کی روشنی ترے حُسن کا پر تو بدل نہیں

ترا ہجر ، شب کا سہاگ تھا ، مرے غم کی مانگ بھری رہی

رہ عشق میں جو ہوا گزر ، دل و جاں کی کچھ نہ رہی خبر

نہ کوئی رفیق نہ ہم سفر ، مرے ساتھ بے خبری رہی

ترے حاسدوں کو ملال ہے ، یہ نصیر فن کا کمال ہے

ترا قول تھا جو سند رہا ، تری بات تھی جو کھری رہی

پیر سید نصیرالدین نصیر شاہ

ہمیں تو حُکمِ مجاوری ہے


” ہمیں تو حُکمِ مجاوری ہے ”

مزارِ دل میں ہے کون مدفن ؟

یہ کس عروسہ کا مقبرہ ہے ؟

نہ کوئی کُتبہ،

نہ کوئی تختی

فقط سرہانے سے پائینتی تک

امر کی بیل اِک لپٹ گئی ہے

جو اِک زمانے سے کہہ رہی ہے

یہاں ٹھکانہ تھا عاشقی کا

یہ پیر خانہ تھا عاشقی کا

کسے خبر کہ یہاں ہے مدفن

فقیر کوئی اسیر کوئی

یا پھر ہے وارث کی ہیر کوئی

مگر ہماری مجال ہی کیا

یہاں جو بولے زبان کھولیں !!

ہمارے لب تو سِلے ہوئے ہیں

نہ جانے کب سے سِلے ہوئے ہیں

"ہمیں تو حُکمِ مجاوری ہے”

میں‎ طلب کے دشت میں پھر چکا


کسی دشت کا لب خشک ہوں جو نہ پائے مژدۂ آب تک

کبھی آئے بھی مری سمت کو تو برس نہ پائے سحاب تک

میں طلب کے دشت میں پھر چکا تو یہ راز مجھ پہ عیاں ہوا

مری تشنگی کے یہ پھیر ہیں کہ جو آب سے ہیں سراب تک

تجھے جان کر یہ پتا چلا تو مقام دید میں اور تھا

کئی مرحلے ہیں فریب کے مری آنکھ سے مرے خواب تک

میں وہ معنی غم عشق ہوں جسے حرف حرف لکھا گیا

کبھی آنسوؤں کی بیاض میں کبھی دل سے لے کے کتاب تک

سلیم احمد