tum na maano magar haqiiqat hai


tum na maano magar haqiiqat hai
ishq insaan kii zaruurat hai

kuchh to dil mubatalaa-e-vahashat hai
kuchh terii yaad bhii qayaamat hai

mere mahabuub mujh se jhuuTh na bol
jhuuTh suurat-e-gar sadaaqat hai

jii rahaa huu.N is aitamaad ke saath
zindagii ko merii zaruurat hai

husn hii husn jalve hii jalve
sirf ehasaas kii zaruurat hai

us ke vaade pe naaz the kyaa kyaa
ab dar-o-baam se nadaamat hai

us kii mahafil me.n baiTh kar dekho
zindagii kitnii Khubsuurat hai

raastaa kaT hii jaayegaa ‘Qabil’
shauq-e-manzil agar salaamat hai

جو ناز تھا کبَھی وُہ ہوتا ہے چُور چُور اَب۔ ۔


جو ناز تھا کبَھی وُہ ہوتا ہے چُور چُور اَب۔۔!
نفرت مِرا مُقدر چاہوں میں پیار کیسا۔؟

یہ کاٹ دار آنکھیں پَیکر تراشتی ہیں
ُالفت کی مُعتبر ہیں اِن میں شرار کیسا۔؟

اب لگتا راز کوئی فُرقت وفا کی بابت۔۔۔!
کُہنہ حِساب گر تھا اب ُرخِ یار کیسا !

!..جو کعبہ میرا قِبلہ تُوحید میرا ایماں
اب بُت تِرے بہت سے تو پاس دار کیسا۔۔!

میرے خَیال رقصِ بِسمل کی طرح ہوتے۔۔۔!
دَم مستی جان بر ہوں تودرد خوار کیسا۔۔۔؟

اے ماہ دل گِرفتہ تو مّہر کے سَبب ہے ۔؟
گَر وَصل روز مّدِ جّز بار بار کیسا۔؟

پامال دل کے ارماں کرکے ہوا پشیماں
افسوس پہ مٹے غم تو اضطرار کیسا

اَب چھاۓ ہوۓ بادل باقی کیا مُسافت۔۔؟
تھاما اَجل نے جاتے غم کا قرار کیسا۔۔؟

پرَور وَفا کیا ہو ساری شبیہ مٹی۔۔!
خاکے کیا فنا اب نقش و نگار کیسا۔۔؟

اچھی نہیں توقع بے رحم لوگ سارے۔۔۔!
مَطلب کی یاری پِہ جگ کا اعتبار کیسا۔۔؟

اے نُورؔ دل بجھا اب ہر سمت تیرگی ہے ۔۔۔!
گُل ہیں چراغ سارے اب اِنتظار کیسا ۔۔؟
از سعدیہ نور ؔ شیخ

Contributed by Tariq Nawaz

apne haathoN kee lakiroN meiN basa le muJhko


 

 

apne haathoN kee lakiroN meiN basa le muJhko
main hooN tera to naseeb apna bana le muJhko

muJhse too poochne aaya hai wafa ke maani
ye teri sadaa-dili maar na Daale muJhko

khud ko maiN baaNt na daalooN kahin daaman-daaman
kar diya tune agar mere hawaale muJhko

bada fir bada hai maiN zehar bhi pee jaaooN ‘qatil’
shart ye hai koi baahoN meiN sambhale muJhko

یہ عشق نہیں آساں، اتنا ہی سمجھ لیجئے


یہ عشق نہیں آساں، اتنا ہی سمجھ لیجئے

اک آگ کا دریا ہے اور ڈوب کے جانا ہے

 

خود حسن وشباب ان کا کیا کم ہے رقیب اپنا

جب دیکھئے، تب وہ ہیں، آئینہ ہے، شانا ہے

 

ہم عشقِ مجسّم ہیں، لب تشنہ ومستسقی

دریا سے طلب کیسی، دریا کو رُلانا ہے

 

تصویر کے دو رُخ ہیں جاں اور غمِ جاناں

اک نقش چھپانا ہے، اک نقش دِکھانا ہے

 

یہ حُسن وجمال اُن کا، یہ عشق وشباب اپنا

جینے کی تمنّا ہے، مرنے کا زمانہ ہے

 

مجھ کو اِسی دُھن میں ہے ہر لحظہ بسر کرنا

اب آئے، وہ اب آئے، لازم اُنہیں آنا ہے

 

خوداری و محرومی، محرومی و خوداری

اب دل کو خدا رکھے، اب دل کا زمانہ ہے

 

اشکوں کے تبسّم میں، آہوں کے ترنّم میں

معصوم محبت کا معصوم فسانہ ہے

 

آنسو تو بہت سے ہیں آنکھوں میں جگر لیکن

بندھ جائے سو موتی ہے، رہ جائے سو دانا ہے

(جگر مُراد آبادی)

Hum kahaN aur tum kahaN jaanaaN


Hum kahaN aur tum kahaN jaanaaN 
HaiN kayee hijr darmiyaN jaanaaN

RaaygaN wasl meN bhi waqt hua 
Par hua khoob raayegaN jaanaaN

Mere ander hi tu kahiN gum hai
Kis se puchhuN tera nishaN jaanaaN

Aalam E bekaraN meN rang hai tu
Tujh meN ThahruN kahaN kahaN jaanaaN

Raushni bhar gayee nigaahoN meN
Ho gaye khaab be amaN jaanaaN

Ab bhi jheeloN meN aks parte haiN
Ab bhi neela hai aasmaN jaanaaN

Joan Elia