meri zindagi pe na muskara mujhe zindagi ka alam nahi


meri zindagi pe na muskara mujhe zindagi ka alam nahi
jise tere gham se ho vasta wo khizan bahar se kam nahi

mera kufr hasil-e-zud hai mera zud hasil-e-kufr hai
meri bandagi wo hai bandagi jo rahin-e-dair-o-haram nahi

mujhe ras aaye khuda kare yahi ishtibah ke sa’atain
unhen aitabar-e-vafa to hai mujhe aitabar-e-sitam nahi

wohi karavan wohi raste wohi zindagi wohi marahale
magar apane-apane muqam par kabhi tum nahi kabhi hum nahi

na wo shan-e-jabr-e-shabab hai na wo rang-e-qahar-e-itab hai
dil-e-beqarar pe in dinon hai sitam yahi ki sitam nahi

na fana meri na baqa meri mujhe ae ‘shakeel’ na dhundiye
main kisi ka husn-e-khayal hun mera kuch vujud-o- adam nahi

Silsilay tor gaya wo sabhi jatay jatay – Faraz


 

silsilay tor gaya woh sabhi jate jate
werna itnay to marasim they ke atey jate

shikwaah’e zulmaat’e shab se to kaheen behtar tha
apne hissay ki koi shamaa jalate jate

kitna asaan tha tere hijr main marna janaaN
phir bhi aik umr lagi jaan se jate jate

jashan maqtal hi na barpa hua werna hum bhi
pa’bajoolaN hi sahi, nachte gate jate

us ki woh janay usay paas’e wafa tha ke na tha
tum “Faraz” apni taraf se to nibhate jate..!!

(Ahmad Faraz)

Muhasara – Ahmed Faraz


محاصرہ

میرے غنیم نے مجھ کو پیام بھیجا ہے
کہ حلقہ زن ہیں میرے گرد لشکری اس کے
فصیلِ شہر کے ہر برج ہر منارے پر
کماں بدست ستادہ ہیں عسکری اس کے
وہ برق لہر بجھا دی گئی ہے جس کی تپش
وجودِ خاک میں آتش فشاں جگاتی تھی
بچھا دیا گیا بارود اس کے پانی میں
وہ جوئے آب، جو میری گلی کو آتی تھی
سبھی دریدہ دہن اب بدن دریدہ ہوئے
سپردار و رسن سارے سر کشیدہ ہوئے
تمام صوفی و سالک سبھی شیوخ و امام
امیدِ لطف پہ ایوانِ کج نگاہ میں ہیں
معززیںِ عدالت حلف اٹھانے کو
مثالِ سائلِ مبرم نشستہ راہ میں ہیں
تم اہلِ حرف کے پندار کے ثناگر تھے
وہ آسمانِ ہنر کے نجوم سامنے ہیں
بس اس قدر تھا کہ دربار سے بلاوا تھا
گدا گرانِ سخن کے ہجوم سامنے ہیں
قلندرانِ وفا کی اساس تو دیکھو
تمھارے ساتھ ہے کون، آس پاس تو دیکھو
سو شرط یہ ہے کہ جو جاں کی اماں چاہتے ہو
تو اپنے لوح و قلم قتل گاہ میں رکھ دو
وگرنہ اب کے نشانہ کمان داروں کا
بس ایک تم ہو، سو غیرت کو راہ میں رکھ دو

یہ شرط نامہ جو دیکھا تو ایلچی سے کہا
اُسے خبر نہیں تاریخ کیا سکھاتی ہے
کہ رات جب کسی خورشید کو شہید کرے
تو صبح اِک نیا سورج تراش لاتی ہے
سو یہ جواب ہے میرا مرے عدو کے لیے
کہ مجھ کو حرصِ کرم ہے نہ خوفِ خمیازہ
اسے ہے سطوتِ شمشیر پر گھمنڈ بہت
اسے شکوہِ قلم کا نہیں ہے اندازہ
مرا قلم نہیں کردار اس محافظ کا
جو اپنے شہر کو محصور کر کے ناز کرے
مرا قلم نہیں کاسہ کسی سبک سر کا
جو غاصبوں کو قصیدوں سے سرفراز کرے
مرا قلم نہیں اوزار اس نقب زن کا
جو اپنے گھر کی ہی چھت میں شگاف ڈالتا ہے
مرا قلم نہیں اس دزدِ نیم شب کا رفیق
جو بے چراغ گھروں پر کمند اچھالتا ہے
مرا قلم نہیں تسبیح اس مبلغ کی
جو بندگی کا بھی ہر دم حساب رکھتا ہے
مرا قلم نہیں میزان ایسے عادل کی
جو اپنے چہرے پہ دہرا نقاب رکھتا ہے
مرا قلم تو امانت ہے میرے لوگوں کی
مرا قلم تو عدالت میرے ضمیر کی ہے
اسی لیے تو جو لکھا تپاکِ جاں سے لکھا
جبھی تو لوچ کماں کا زبان تیر کی ہے
میں کٹ گروں کہ سلامت رہوں، یقیں ہے مجھے
کہ یہ حصارِ ستم کوئی تو گرائے گا
تمام عمر کی ایزا نصیبیوں کی قسم
مرے قلم کا سفر رائگاں نہ جائے گا

احمد فراز

Qalam Badast Houn Hairaa’n Houn Kay Kya Likhoon


Qalam Badast Houn Hairaa’n Houn Kay Kya Likhoon

Mein Teri Baat Ko Duniya Ka Tazkira Likhoon

Likhoo’n K Tuu Nay Mohabbat Kee Roshnee Likhee

Terey Sukhan Ko Sitaroo’n Ka Qaflaa Likhoon

Jahan Yazeed Bohut Hoo’n Hussain Akayla Ho

Tou Kuoo’n Na Apnee Zameen Ko Bhee Karbala Likhoon

Terey Baghair Har Naqsh “Naqsh-E-Faryadi”

Tuu Phool “Dast-E-Saba” Par Hay Ablaa Likhoon

Misaal “Dahst-E-Nung” Thi Wafa Unn Kee

Tou Kis Tarah Unhein Yaraan-E Ba-Safaa Likhoon

Jagah Jagah “Saleebain Merey Dareechey Main”

So Ism-E-Eesa O Mansoor Ja Baja Likhoon

Garifta E Dil Hein Bohut “Sham E Sheher E Yaraan” Aaj

Kahaan Hay Tou K Tujhey Haal E Dilbaraa Likhoon

Kahan Gaya Hey “Merey Dil Merey Musafir” Tou

Kay Mein Tujhey Rah O Manzil Ka Majraa Likhoon

Tou Mujh Ko Chor Gaya Likh K “Nuskha-E-Hayee Wafa”

Mein Kis Terah Tujhey Ay Dost Bay Wafa Likhoon

“Shaheed Jism Salamat Uthaye Jatey Hein”

Khuda Na Karda K Mein Tera Marsiyah Likhoon

2013 in review


The WordPress.com stats helper monkeys prepared a 2013 annual report for this blog.

Here’s an excerpt:

The Louvre Museum has 8.5 million visitors per year. This blog was viewed about 84,000 times in 2013. If it were an exhibit at the Louvre Museum, it would take about 4 days for that many people to see it.

Click here to see the complete report.

Nazar wo hai


nazar wo hai ke jo kauno makan ke paar ho jaaye
magar jab ruh-e-taabaN par pade bekaar ho jaaye

nazar us huSn par thahre to aakhir kis tarah thahre
kabhi jo phool ban jaaye kabhi rukhsaar ho jaaye

chala jaata hoon hansta kehlta mauj-e-hawadish se
agar aasaaniyan ho zindagi dushwaar ho jaaye

(Asghar Gondvii)