apne haathoN kee lakiroN meiN basa le muJhko


 

 

apne haathoN kee lakiroN meiN basa le muJhko
main hooN tera to naseeb apna bana le muJhko

muJhse too poochne aaya hai wafa ke maani
ye teri sadaa-dili maar na Daale muJhko

khud ko maiN baaNt na daalooN kahin daaman-daaman
kar diya tune agar mere hawaale muJhko

bada fir bada hai maiN zehar bhi pee jaaooN ‘qatil’
shart ye hai koi baahoN meiN sambhale muJhko

یہ عشق نہیں آساں، اتنا ہی سمجھ لیجئے


یہ عشق نہیں آساں، اتنا ہی سمجھ لیجئے

اک آگ کا دریا ہے اور ڈوب کے جانا ہے

 

خود حسن وشباب ان کا کیا کم ہے رقیب اپنا

جب دیکھئے، تب وہ ہیں، آئینہ ہے، شانا ہے

 

ہم عشقِ مجسّم ہیں، لب تشنہ ومستسقی

دریا سے طلب کیسی، دریا کو رُلانا ہے

 

تصویر کے دو رُخ ہیں جاں اور غمِ جاناں

اک نقش چھپانا ہے، اک نقش دِکھانا ہے

 

یہ حُسن وجمال اُن کا، یہ عشق وشباب اپنا

جینے کی تمنّا ہے، مرنے کا زمانہ ہے

 

مجھ کو اِسی دُھن میں ہے ہر لحظہ بسر کرنا

اب آئے، وہ اب آئے، لازم اُنہیں آنا ہے

 

خوداری و محرومی، محرومی و خوداری

اب دل کو خدا رکھے، اب دل کا زمانہ ہے

 

اشکوں کے تبسّم میں، آہوں کے ترنّم میں

معصوم محبت کا معصوم فسانہ ہے

 

آنسو تو بہت سے ہیں آنکھوں میں جگر لیکن

بندھ جائے سو موتی ہے، رہ جائے سو دانا ہے

(جگر مُراد آبادی)

Hum kahaN aur tum kahaN jaanaaN


Hum kahaN aur tum kahaN jaanaaN 
HaiN kayee hijr darmiyaN jaanaaN

RaaygaN wasl meN bhi waqt hua 
Par hua khoob raayegaN jaanaaN

Mere ander hi tu kahiN gum hai
Kis se puchhuN tera nishaN jaanaaN

Aalam E bekaraN meN rang hai tu
Tujh meN ThahruN kahaN kahaN jaanaaN

Raushni bhar gayee nigaahoN meN
Ho gaye khaab be amaN jaanaaN

Ab bhi jheeloN meN aks parte haiN
Ab bhi neela hai aasmaN jaanaaN

Joan Elia 

Na ganwa’o navak-e-neemkash, dil-e-reza reza ganwa diya


Na ganwa’o navak-e-neemkash, dil-e-reza reza ganwa diya
jo bachay hein sung sameit lo, tan-e-dagh dagh lutaa diya

mere charagar ko naveed ho, saf-e-dushmana ko khabar karo
woh jo qarz rakhtay thay jaan par,wo hisaab aaj chuka diya

karo kaj jabeen pe sar-e-kafan, mere qaatilon ko gumaan na ho
ke ghuroor-e-ishq ka baankpan, pas-e-marg hum ne bhula diya

udher ek harf ki kushtni, yahan laakh uzr tha guftni
jo kaha to sun ke urda diya, jo likha to parh ke mita diya

jo rukay to koh-e-garan thay hum, jo chalay to jan se guzar gaye
rah-e-yaar hum ne qadam qadam, tujhe yaadgaar bana diya

~Faiz~

ek parwaz dikhai di hai


 

 

ek parwaz dikhai di hai
teri aavaz sunai di hai
jis ki aankhon mein kati thi sadiyan
us ne sadiyon ki judai di hai
sirf ek safah palat kar us ne
saari baton ki safai di hai
phir waheen laut ki jana hoga
yar ne kaisi rihai di hai
aag main kya kya jala hai shab bhar
kitni khus-rang dikhai di hai

(Gulzar)

فاصلے نہیں مٹتے “


“خواب اور خواہش میں
نیند بھر کی دوری ہے
وصل اور جدائی میں
آنکھ بھر کا وقفہ ہے
ہجر کے اندھیروں کی
چاند بھر تمنا ہے
پھر بھی ایسا ہوتا ہے
فاصلے مٹانے میں
عمر بیت جاتی ہے
فاصلے نہیں مٹتے “